33

دسمبرہرسال کیوںآجاتاہے…ایم سرورصدیقی

OOOسوچتاہوں دسمبرکا مہینہ ہرسال کیوں آجاتاہے؟۔۔ہرسال دل کے زخم ہرے ہو جاتے ہیں اور اداسی رگ و پے میں گویاپھیل سی ہو جاتی ہے دسمبر کا مہینہ کیلنڈرسے نکال بھی دیا جائے تو حقائق تو نہیں بدل سکتے۔۔تلخ یادوں سے جان تو نہیں چھڑائی جا سکتی۔۔۔وقت پلٹ نہیں سکتا ۔۔حالات کا سامنا کرنے میں ہی عافیت ہے۔۔حالات کا مردانہ وار مقابلہ کرنا ہی حالات کا تقاضا ہوتاہے اورحالات سے سبق سیکھنا ہی دانائی ہے لیکن ہم پاکستانیوں نے یہ تینوں کام ہی کرنا چھوڑ دئیے ہیں ہمیشہ بلی کو دیکھ کر کبوترکی مانند آنکھیں بندکرنے پرہی اکتفا کرنا مناسب خیال کیا ہے۔۔۔ایسی اذیت۔۔۔ایسی بے بسی ۔۔۔ ایسی ذلت شاید عالمِ اسلام کی تاریخ میں شاذ شاذ ہی مثال ہو۔۔دنیا کی مانی جنگجو فوج کا اپنے دشمن کے سامنے ہتھیار ڈالنا اور90000فوجیوں کا جنگی قید ی بننا ایسا داغ ہے جو شاید کبھی نہ دھویا جا سکے۔۔16دسمبر سقوطِ ڈھاکہ ہماری موجودہ اسلامی تاریخ سب سے سیاہ دن کہا جا سکتاہے یہ ایک سانحہ۔۔۔ یہ المیہ بھلائے نہیں بھولتا لیکن اس سے بھی بڑا سانحہ یہ ہے کہ ہم نے اس سانحہ سے بھی کچھ نہیں سیکھا۔۔قوم کے وہی لچھن ہیں۔۔ وہی لاپرواہی۔۔۔پاکستان سے وہی بے نیازی۔۔وہی مالِ مفت دلِ بے رحم جیسا سلوک۔ سقوطِ ڈھاکہ والے دن ہم نے گلی گلی لوگوں کو دھاڑیں مارمارکر روتے دیکھا ہے کیا جوان۔۔کیا بوڑھے ۔۔کیا عورتیں ۔۔کیا لڑکیاں سب کے سب ۔۔۔گھر گھر ہچکیوں اور سسکیوں کی آوازیں سن کر مزید اداسی چھا جاتی تھی۔۔۔اس صدی کا سب سے بڑا سانحہ رونما ہوئے نصف صدی ہونے کو ہے لیکن ہماری آنکھیں اب بھی نہیں کھلیں حالانکہ سقوطِ ڈھاکہ کے بعدہمارے سینے صندل کی طرح سلگتے رہنے چاہییں تھے باقی مانندہ پاکستان کو دنیا کا سب سے عظیم خطہ بنانے کیلئے دن رات ایک کردینا چاہیے تھا تاکہ شکست کا داغ دھویا جا سکتا سانحات۔۔۔ المیے۔۔۔ اور شکست کربِ مسلسل ہے جو خوابیدہ قوموں کو جگادیتی ہے لیکن اس معاملہ میں ہم خاصے بے حس واقع ہوئے ہیں۔۔۔۔کاش ہمارے 90000فوجی دشمن سے لڑتے لڑتے شہید ہو جاتے ہتھیار ڈالنے کی شرمندگی نہ اٹھانا پڑتی۔۔۔کہتے ہیں مشرقی پاکستان میں شکست فوجی نہیں سیاسی تھی۔۔۔عوامل جو بھی ہوں۔۔حالات جیسے بھی شکست شکست ہوتی ہے یاد کرو! سقوطِ ڈھاکہ والے دن اندرا گاندھی نے کہا تھا میں نے دو قومی نظریہ بحیرہ ہند میں ڈبودیاہے۔۔۔اتنی ہزیمت بھی ہم نے برداشت کرلی ایک ملک میں رہنے کے باوجودمگر آج بھی سندھی ،بلوچی،پٹھان اور پنجابی کی تفریق سے باہر نہیں نکلے۔۔۔دنیا میں دو ملک مذہب کی بنیاد پر معرضِ وجودمیں آئے پاکستان اور اسرائیل۔۔۔ لیکن دنیا بھرکی اسلام دشمن طاقتوں نے آج تک پاکستان کو دل سے تسلیم نہیں کیایہود و نصاریٰ کا گٹھ جوڑ اسی سلسلہ کی کڑیاں ہیں۔پاکستان کے قیام کے وقت دنیا کی سب سے بڑی ہجرت کی گئی لاکھوں افراد گاجر مولی کی طرح کاٹ دئیے گئے۔۔ہزاروں مسلمان خواتین کی عصمت دری کی گئی پاکستان کے قیام کیلئے دی جانے والی قربانیاں کوئی معمولی نہیں ہیں تاریخ میں یہ قربانیاں یقیناًناقابلِ فراموش ہیں مسلمانوں نے تو قدم قدم پر قربانیاں دی ہیں آج کی نسلوں کو اس کا قطعی ادراک نہیں ۔۔ ارضِ پاک کوگلہ تو اپنی ہرنسل سے ہے ایک بات طے ہے پاکستان کو جتنا نقصان یہاں بسنے والی اشرافیہ نے پہنچایاہے کسی دشمن نے نہیں پہنچایا ہوگا پاکستان کے تمام مسائل اور عوام کی محرومیوں کے یہی ذمہ دارہیں یہ ان لوگوں نے اس ملک کو کبھی سونے کا انڈہ دینے والی مرغی سے زیادہ اہمیت نہیں دی اس لئے سوچتا رہتا ہوں دسمبرکا مہینہ ہرسال کیوں آجاتاہے؟۔۔ہرسال دل کے زخم ہرے ہو جاتے ہیں اور اداسی رگ و پے میں گویاپھیل سی ہو جاتی ہے دسمبر کا مہینہ کیلنڈرسے نکال بھی دیا جائے تو حقائق تو نہیں بدل سکتے۔۔کاش قیامِ پاکستان کے اگلے روز ہجرت کے وقت لاہور آنے والے مہاجرین کی لہومیں ڈوبی ٹرین عجائب گھرمیں رکھ دی جاتی تولوگوں کو احساس ہوتا کہ اس ملک کیلئے کتنی قربانیاں دی گئی تھیں پاکستان کے ساتھ یہ سلوک روا نہ ہوتا والدِ محترم محمد حسین صاحب مرحوم و مغفوراکثرکہا کرتے تھے’’ مجھے ایمان کی حد تک یقین ہے کہ پاکستان قیامت تک قائم رہے گا کوئی جو بھی کرلے اس ملک کی اللہ حفاظت کرنے والاہے’’۔ ایک اور بات قرآن حکیم میں اللہ تبارک تعالیٰ نے جنت کی جتنی نعمتوں کا تذکرہ کیا ہے وہ پاکستان میں افراط سے پائی جاتی ہیں اور ماہِ رمضان میں27ویں شب لیلۃ القدرکو پاکستان کا لاالہ الا اللہ کی بنیادپروجودمیں آنا منشاء ایزدی ہے اس ملک کی قدر نہ کرنا اللہ کی نعمتوں کو ٹھکرانے کے مترادف ہے عام لوگوں کو اپنے وطن سے بہت محبت ہے لیکن کم و بیش1000 خاندانوں نے اس ملک کو یرغمال بنارکھاہے بدقسمتی سے یہ لوگ ملک کے وسائل پرقابض ہیں ۔۔ ایک اور المیہ یہ ہے کہ جو لوگ قیامِ پاکستان کے شدید مخالف تھے پاکستان بنا تو وہی ایک منصوبے کے تحت ریاست، سیاست اور جمہوریت کے چمپئن بن کر اقتدارپر قابض ہوگئے اور ہر حکومت کا کسی نہ کسی انداز میں حصہ بن کر مزے لوٹ رہے ہیں ان کا اقتدار میں براجمان ہونا سدا بہارہے یہی لوگ اداروں کا استحکام نہیں چاہتے ۔ معذرت کے ساتھ ۔۔۔کسی کی دل آزاری مقصودنہیں یہ کسی پر نکتہ چینی یا تنقید بھی نہیں ایک عجیب بات ہے سوچ کا زاویہ ہے ایک نقطہ نظر جان کر گواراکرلیں کہ کسی نہ کسی اندازمیں سقوطِ ڈھاکہ کے ذمہ دار جتنے بھی کردار(شیخ مجیب الرحمن، ذوالفقارعلی بھٹو ،اندرا گاندھی) ہیں سب کے سب غیر فطری موت کا شکارہوئے۔۔واللہ عالم بالصواب اللہ دلوں اورنیتوں کا حال بہتر جانتاہے۔اس لئے سوچتا رہتا ہوں دسمبرکا مہینہ ہرسال کیوں آجاتاہے؟۔۔ہرسال دل کے زخم ہرے ہو جاتے ہیں اور اداسی رگ و پے میں گویا تحلیل سی ہو جاتی ہے دسمبر کا مہینہ کیلنڈرسے نکال بھی دیا جائے تو حقائق تو نہیں بدل سکتے اور یہ سوچ سوچ کرنہ جانے کتنے محبِ وطن سکتے میں ہیں کہ نہ حقائق بدل سکتے ہیں اور نہ پاکستانی۔۔۔دنیا میں پاکستان شاید واحدملک ہے جس میں رہنے والوں کی اکثریت کو اپنے ہی دیس سے پیار نہیں اور جو اس پاک وطن کی محبت کے گن گاتے ہیں ان کیلئے زندگی بوجھ سی بن گئی ہے حیات کے دن رات عذاب۔۔۔ہماری اشرافیہ نے ان کے مقدرمیں محرومیاں اور مایوسیاں لکھ دی ہیں اور جب مایوسیاں حدسے زیادہ بڑھ جائیں انسان کو اپنی ذات سے بھی محبت ختم ہو جاتی ہے آج جو لوگ اقتدار کے۔ مزے لوٹ رہے ہیں ان میں کچھ تو علی الاعلان کہتے پھرتے ہیں میں پاکستان زندہ باد نہیں کہوں گا ۔۔ کچھ پاکستان مردہ باد کے نعرے لگارہے ہیں اور کچھ اقتدار سے ایسے چمٹے ہوئے ہیں جیسے وہ پاکستان کے جہیز میں آئے ہوئے ہوں ان کو شرم آتی ہے نہ حیا پاکستان کا کھاتے ہیں اور اسی کا برا سوچتے ہیں۔ غورکریں۔۔ دیکھیں تو محسوس ہوگا کہ باقی مانندہ پاکستان میں بھی 16دسمبر والے حالات پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے اس ملک میں امیر امیر تر ۔۔غریب غریب ترین ہوتا جارہا ہے آج پھر ملک خطرے میں ہے مشرقی پاکستان بھی مایوسی اور محرومیوں کے باعث ٹوٹا تھا آج بھی محرومیوں اور مایوسیوں کا دور دورہ ہے سیاستدانوں نے مک مکا کانام جمہوریت رکھ دیا ہے ان کے اپنے اربوں کھربوں بیرونِ ممالک میں ہیں لیکن ان کا دل بھرتاہے نہ جیب نہ نیت۔۔۔کروڑوں ہم وطن خطِ غربت کی لکیر سے بھی نیچے زندگی بسرکرنے پر مجبور ہیں کبھی یہی حال مشرقی پاکستان کے باسیوں کا تھا جب ملک میں سماجی انصاف ملے۔۔ نہ۔پیٹ بھرکر روٹی ۔۔۔غریبوں کے پڑھے لکھے بچوں کو روزگار نہ ملے اشرافیہ کی نااہل اولاد کلیدی عہدوں پر فائز ہو جائے عام آدمی کو کیا فرق پڑتاہے 16دسمبر آئے نہ آئے۔۔۔ہم جیسے لوگ اس روزکبھی دل میں۔۔کبھی پلکیں اشکبارکرکے رولیتے ہیں یہ بات دعوے سے کہی جا سکتی ہے ہمارے حکمرانوں کومطلق احساس نہیں عوام کے ساتھ کیاہورہاہے؟ سقوطِ ڈھاکہ ہماری موجودہ اسلامی تاریخ سب سے سیاہ دن کہا جا سکتاہے اس صدی کا سب سے بڑا سانحہ۔۔۔ یہ المیہ بھلائے نہیں بھولتا لیکن اس سے بھی بڑا سانحہ یہ ہے کہ ہم نے اس سانحہ سے بھی کچھ نہیں سیکھا۔۔قوم کے وہی لچھن ہیں۔۔ وہی لاپرواہی۔۔۔پاکستان سے وہی بے نیازی۔۔وہی مالِ مفت دلِ بے رحم جیسا سلوک۔۔۔خدا خیرکرے ہم مزید کسی ازمائش کے قابل نہیں ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

اپنا تبصرہ بھیجیں