34

غازی صفت علی سو سال کی عمر میں وفات پاگئے۔

مستوج(نامہ نگار)پرواک /میراگرام سے تعلق رکھنے والے تحریک آزادی گلگت بلتستان وسکردو کے مایہ ناز مجاہد غازی صفت علی المعروف سیٹ تقریبا ایک سو سال سے زائد عمر گزارنے کے بعد نقضائے الہی وفات پاگئے۔ مرحوم کا تعلق پرواک میراگرام متوسط گھرانے سے تھا آپ نے آیام نوجوانی میں چترال سکاؤٹس میں شمولیت اختیار کرلیتھی۔ انیس سو اڑتالیس کے جگ سکردو میں چترال سکاؤٹس کے دستے جب سکردو کے سنگلاخ پہاڑوں میں گلگت سکاؤٹس سے مل کر ڈوگرہ فوج کے خلاف برسرپیکار تھے تو مرحوم صفت علی بھی اسی دستے کا حصہ رہے۔ مرحوم کے اپنے بقول وہ سکردو کے مورچوں میں کئی کئی ہفتوں تک بھوکے رہ کر دشمن کا مقابلہ کیااور کئی مرتبہ خالی گوندے ہوئے آٹے پر وقت گزارا۔ اسی طرح ڈوگرے اور ان کے بھارتی آقا سکردو سے مستقلا راہ فرار اختیار کرنے پر مجبور ہوگئے۔چترال سکاؤٹس کے ان شیر دل سپاہیوں کے کارناموں پر اس وقت کے جنگ آزادی گلگت بلتستان وسکردو کے سپہ سالار کرنیل مرزاحسن خان نے بھی اپنی خود نوشت سونح عمری” شمشیر سے زنجیر تک” میں کافی تفصیل سے روشنی ڈالی ہے۔مرحوم صفت علی سیٹ، الواعظ ہیبت علی اورانجینئر محمد والی کے والد، استاد الاساتذہ او رجماعت اسلامی چترال کے ممبر شوری حاجی اموخت علی کے چچا ذات بھائی، نائب ناظم ویلج کونسل پرواک عید علی اور ریٹائر اسسٹنٹ کمشنر زرمت علی (شاہ نوف) کا چچااور شمس الرحمن ہونولال کے دادا تھے۔

Print Friendly, PDF & Email

اپنا تبصرہ بھیجیں