56

    طلاق طلاق طلاق ۔۔۔شہزادہ بہرام – کوالا لمپور ملیشیا

                                    آج کل بہت سی لڑکیاں ایسے ہی دور سے گزر رہی ہیں ، میرے لیئے طلاق یافتہ ہونا میرا جرم بنا ہوا ہے ، پڑوس میں ایک بہنہے اس کے لیئے اس کا موٹا ہونا اور چہرے پے کیل مہاسوں کے داغ رکاوٹ بنے ہوۓ ہیں ، کزن کے لیئے اسکا ضرورت سےزیادہ سمارٹ ہونا رکاوٹ بنا ہے ،شادی کے لئے بنیادی ترجیحات …خوبصورتی ، مال ، دینداری ہے مگر اس شادی کے نام پرعجب گہما گہمی نے معاشرے کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے .وہ کام جو سب سے آسان ترین اور سادہ ہونا چاہئے وہ ہی سب سےپیچیدہ ہوتا چلا جا رہا ہے اور وجہ ہے ہمارے خود ساختہ معیار جو خون کے کینسر کی طرح معاشرے کی تمام رگوں میں سرایتکر چکے ہیں…

آج خوبصورتی کا معیار بےحیائی کے ساتھ کٹے بال لمبے ناخن اور میک اپ زدہ چہرے ہیں اور معاشرے میں بے حیائی کوبولڈنس کا نام دے کر زہر کو خوبصورت پیکنگ میں پیش کر دیا گیا ہے. رہی سہی کسر میڈیا پر نمائشی عورتوں نے پوری کردی جہاں اک اک عضو کی شیپ و ڈزائین پوری وضاحت سے قرب و جوار سے دکھایا جاتا ہے… 

ایسے میں ایک لڑکی سر پر دوپٹہ اوڑھے شرم سے سر جھکائے عمومی حسن کہاں ایسے معیار پر پوری اترے گا .نظروں سےاسکا ایکسرے کرنے والے یہ بھول جاتے ہیں کہ وہ بیچاری جانتی ہی نہیں کہ جسم کے کسی حصے کی کیسی بناوٹ ” اِن ” ہے.اسے کیا پتہ کہ کس اداکارہ نے اس ماہ کتنے لاکھ لگا کہ ہونٹوں کی بناوٹ تبدیل کروائی ہے ، کس جم کو کروڑوں دے کرخوبصورت بناوٹی جسم بنایا ہے کون کتنے کروڑ کی سرجری کے بعد ڈمپل بنواتی ہیں…

وہ سر جھکائے یہ سب نہیں سوچتی. کیونکہ اسکے پاس آپکے معیار پر پورا اترنے کے لیے روپے نہیں ہوتے. وہ کاجل لگا کراپنے باپ سے بھی شرمانے والی لڑکی یقنا آپکا معیار نہیں ہے کوئی اسکے دل سے پوچھے تو آپ بھی اسکے معیار کے نہیںہیں.مگر آفرین ہے اس مشرقی لڑکی پر جو دل کے تمام بوجھ سنبھالے شائستگی سے آپ کے سامنے صبر کی تفسیر بنی بیٹھیہے. آپکی ریجکشن اس کو کیسی موت مارتی ہے آپکے بے حس دل اس کرب تک پہنچ ہی نہیں سکتے. عمدہ خوشبوؤں میں بسےبساند ذدہ وجود گھر گھر جا کر اپنی سڑاند سے ماحول آلودہ کرنے والے افراد جو کسی بھی بیٹی کو شکل و صورت میں رد کرکے آئیں . تف ! ایسے شائستہ لہجوں پر جو کسی کی سفید پوشی کا بھرم نہیں رکھتے لڑکی کی ناک ذرا موٹی ہے قد ذرا کم ہےرنگ ذرا گندمی مائل ہے لڑکی تھوڑی فربہی سی ہے بال ٹھیک نہیں، آنکھیں ٹھیک نہیں لڑکی بہت پتلی ہے لڑکی بہت موٹی ہےاسکے دانت ٹھیک نہیں لڑکی میں یہ کمی ہے یہ کمی ہے …

آپ کے انکار کو سن کر وہ خود سے بھی شرمندہ ہوتی اپنی شخصیت پر اعتماد کی آخری رمق بهی کهو دیتی ہے مگر آپکومبارک کے آپ نے سستی تفریح حاصل کر لی آپ نے جھکی نظروں والی اس معصوم کو تول لیا اسکی ماں کی خدمت سے لطفبھی اٹھا لیا اور باپ کی رقم سے زبان کا چسکا بھی پورا ہوا کتنا فائدہ مند ہے ناں لڑکے کی ماں بہن ہونا ؟ 

اس معاشرے میں ڈوبتی سسکیوں ، بنجر آنکھوں مایوس دل کے ساتھ سفید پوشی کے بھرم میں خوداری سنبھالے ماں اور جهکیکمر لیے باپ آپکی فرعونیت کا شکار ہو رہا ہے .کیا انسانیت کے تمام اسباق بھول چکے ہیں؟ اتنی سفاکیت کہاں سے آگئی دلوںمیں کیوں اس قدر بے رحم ہوگئے ہیں کہ اپنے ظلم کا ادراک بھی نہی رہا ؟ 

ترجیحات میں خوبصورتی کا معیار ہی عریانیت کو بنا لینے کا حکم تو نہ تھا . پھر تم کہاں سے بهٹکائے گئے . 

مالدار عورت دوسری ترجیح ہے مگر اس کا مطلب یہ ہرگز نہ تھا کہ غریب گھرانوں میں خون چوسنے والی جونکوں کی طرحبیٹی کے باپ کے مال کو چوس لیا جائے ہرگز نہیں … 

جہیز کے نام پر جو ذلالت کا طوق پہنا دینے والے معاشرے میں بڑھتے ہوئے انتشار ، کرپشن، ظلم و زیادتی کے ذمہ دار ہیں . یہمعاملہ اتنا سہل نہیں کہ آپ نے بھاری جہیز کی فرمائش کر دی اور آپ کو وہ مل گیا اس مل جانے کے پیچھے کسی باپ کیخودداری کچلی گئی ہوگی وہ بال بال مقروض ہوا ہوگا کسی خاندان کے کل اثاثے لٹ گئے ہونگے تو کیا آپ سے سوال نہیں کیاجائے گا ؟ آپ کل قیامت کے دن یونہی چھوڑ دیئے جاؤ گے ؟ 

یاد رکھیں وہ منصف ذرے برابر عمل کا بهی حساب لے گا. 

دین دار عورت سے شادی کرنا اسلام میں بنیادی ترجیح ہے مگر افسوس صد افسوس کہ اس پر کوئی توجہ نہیں دیتا. کتنے لوگرشتہ کرنے کی بنیادی ترجیح دینداری کو دیتے ہیں؟ کتبے لوگ دنیاوی تعلیم کے ساتھ دینی تعلیم کا سوال کرتے ہیں ؟ نماز کاسوال کون کرتا ہے؟ آج تک آپ نے یہ سوال سنا کہ بیٹا آپ روزانہ کتنا قرآن پڑهتی ہیں ؟ ایک قرآن کتنے دن میں مکمل کرتیہیں؟ دین کے معاملے میں کیا سیکها ہے آپ نے؟ آپ عملی طور پر کتنی مومنہ ہیں ؟ اللہ تعالیٰ سے کتنی محبت رکهتی ہیں ؟ کوئیایسے سوال نہیں کرتا ( إلا ماشاءاللہ )

اور یوں شادیاں ہو جاتیں ہیں۔ 

 مختلف مزاج والے دو خاندان نئے رشتوں کی بنیاد رکھتے ہیں ایک طرف وہ لڑکی جو بیسیوں بار رد ہوچکی ہے وہ احساسکمتری ، خوف ، بےبسی، عدم تحفظ ، بے یقینی و بے اعتمادی پر اپنے نئی زندگی کا آغاز کرتی ہے یہ معاشرے کی وہ عورتہے جس نے اپنے نشئی شوہر کے ساتھ بھی زندگی گزارنی ہے ظالم ساس کو بھی برداشت کرنا ہے اس نے سسرال میں اپنی جگہبنانے کے لیے ہر ظلم زیادتی کو برداشت کرنا ہے کیونکہ اس کو ہر وقت اجڑ جانے، طلاق یافتہ ہونے کی شکل میں والدین پربوجھ بننے والی زندگی ہر وقت ہراساں کئے رکهتی ہے اور دوسری طرف بہت چاؤ سے لائی گئی وہ عورت جو احساس تفاخرکے ساتھ ہر شے کو ہیچ سمجھتے ہوئے روندتی جاتی ہے یا تو اپنے شوہر کو لے کر الگ ہوجائے گی یا سسرال کا جینا حرامکرے گی اور سب ایک دوسرے کو الزام دیتے ہوئے ایک دوسرے سے شرمندہ اپنے انتخاب کو کوستے ہیں کھلے چھپے شکوئےہوں گے ہر کسی کو بتائیں گے کہ اس بڑھاپے میں بیٹا ہاتھ سے نکل گیا بہو انگلیوں پر نچا رہی ہے یہ ستم ڈها رہی وہ ظلم کررہی ہے۔

یہ ہے ہمارا غیر متوازن معاشرہ جہاں کسی جگہ بزرگ ساس سسر کو بہو گھر سے نکال دیتی ہے تو کہیں بچوں سمیت بیٹیوالدین کے گھر بیٹھی اپنی غلطی کی متلاشی ہے .

ہم کسی معجزے کے منتظر ہیں کہ ایک دن آئے گا جب ہم صبح اٹھیں گے تو ہر طرف سکون ہوگا خوشیاں ہونگی سب مسائل ختمہو جائیں گے کوئی بیٹی رشتے کی آس میں بوڑھی نہیں ہوگی کوئی بہو چولہا پھٹنے سے نہیں مرے گی کوئی بزرگ رسوا نہیںہوگا مگر ایسا کبھی نہیں ہوگا جانتے ہیں کیوں ؟ کیونکہ ہم چاہتے ہیں پہلے سارا معاشرہ اچھا ہوجائے سب اپنے فرائض پورےکریں پھر ہم بھی ٹھیک ہو جائیں گے ضرورت ہے خود کو بدلنے کی جس کسی مقام پر ہم ہیں وہیں سے اصلاح کا آغاز کیجئےکیونکہ معاشرہ افراد کے مجموعے کا نام ہے اور افراد میں آپ اور میں ہم سب آتے ہیں معاشرہ تب بدلے گا جب ہم ابتدائی طورپر خدمات کو بدلیں گے آغاز اپنی ذات سے کریں گے . اور یہ زیادہ مشکل نہیں بس کسی مقام پر رک کر دل کو سمجھانے کیضرورت ہے۔

Print Friendly, PDF & Email