تازہ ترین
Home >> تازہ ترین >> چترال میں پی ٹی آئی کے ساتھ آل پاکستان مسلم لیگ کی سیٹ ایڈجسٹمنٹ خبر سوشل میڈیا میں چلاکر غلط فہمی پھیلانے کی کوشش ہے؍ورکروں کاپریس کانفرنس

چترال میں پی ٹی آئی کے ساتھ آل پاکستان مسلم لیگ کی سیٹ ایڈجسٹمنٹ خبر سوشل میڈیا میں چلاکر غلط فہمی پھیلانے کی کوشش ہے؍ورکروں کاپریس کانفرنس

چترال (نمائندہ ڈیلی چترال) پاکستان تحریک انصاف ضلع چترال نے آل پاکستان مسلم لیگ کے امیدوار برائے این اے۔1چترال ڈاکٹر امجد کے پی ٹی آئی کے بارے میں بیان کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ چترال میں پی ٹی آئی کے ساتھ آل پاکستان مسلم لیگ کی سیٹ ایڈجسٹمنٹ یا سیاسی مفاہمت کی خود ساختہ ، من گھڑت اور بدنیتی پر مبنی خبر سوشل میڈیا میں چلاکر غلط فہمی پھیلانے کی کوشش کی جارہی ہے۔ منگل کے روز چترال پریس کلب میں ایک پرہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جنرل سیکرٹری لوئر چترال امین الرحمن ، جنرل سیکرٹری اپر چترال علاء الدین عرفی،اقلیتی ممبر ضلع کونسل نابیگ کالاش ایڈوکیٹ، وی سی ناظم حیات الرحمن ، صدر یوتھ ونگ ضیاء الرحمن ، رحیم اللہ ایڈوکیٹ اور میر جمشید، وزیر زادہ کالاش ، یوسی صدر شیر فراز اور دوسرے رہنماؤں نے کہاکہ پی ٹی آئی چترال میں ناقابل تسخیر سیاسی قوت بن چکی ہے اور 25۔جولائی کو اس کی کامیابی چترال میں یقینی ہوچکی ہے اور اس صورت حال میں اے پی ایم ایل کے امیدوار ڈاکٹر امجد نے پی ٹی آئی کے بارے میں غلط اور مضحکہ خیز بیان جاری کرکے اس پارٹی کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ ڈاکٹر امجد کو اپنی عزت عزیز ہے تو وہ چترال سے بھی الیکشن سے دستبردار ہوکر کراچی واپس چلاجائے جس طرح انہوں نے اسلام آباد کی دو حلقوں سے راہ فرار اختیار کرکے اپنی عزت بچانے کی کوشش کی ہے۔ا نہوں نے ڈاکٹر امجد کو چوبیس گھنٹے کا الٹی میٹم دیتے ہوئے کہاہے کہ اگر وہ اپنے بیان کو واپس لے کر مغذرت نہ کرے تو ان کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے گی تاکہ آئندہ کوئی سیاسی خانہ بدوش کو چترال کو سیٹ کو خیرات سمجھ کر چترال آنے کی جراء ت نہ کرے ۔ پی ٹی آئی کے رہنماؤں نے کہاکہ ڈاکٹر امجد کی غیر ذمہ دارانہ روئیے کی وجہ سے اس پارٹی کا ضلعی صدر اور دوسرے عہدیدار پارٹی چھوڑکر چلے گئے ہیں۔انہوں نے ڈاکٹر امجد پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ وہ چترال میں پیسے کے بل بوتے پر ووٹ لینے کی کوشش کررہے ہیں اور یہاں پر پیسے کے کلچر کو فروع دے رہے ہیں۔


error: Content is protected !!