عوام مستوج، ڑاسپور اور یارخون کا اجتجاجی دھرنا پھر شروع

بونی شندور روڈ اور مستوج بروغل روڈ کی تعمیروپختگی کے لئے شروع کردہ تحریک چار روز کے وقفے کے بعد دوبارہ احتجاجی دھرنے کے صورت میں شروع ہوئی۔ اتوار 30 جون کی صبح تینوں یوسیز کے عوام کا جم غفیر مستوج پل میں جمع ہونا شروع ہوئے اور اب عوام مستوج پل پر احتجاجی دھرنا دئیے بیٹھے ہیں۔ تاہم ٹریفک کی روانی جاری و ساری ہے اس سے قبل 24 اور 25 جون 2019ء کو عوام نے اسی مقام پر دھرنا دے کر روڈ بلاگ کیا تھا 25 جون کو اے ڈی سی اپر چترال نے دوسرے انتظامی عہدیداران کے ہمراہ مظاہرین سے مزاکرات کئے۔ مظاہرین کے مطابق ان مذاکرات میں اے ڈی سی اپر چترال نے انہیں یقین دلایا تھا کہ انہیں 30 جون تک کا وقت دیا جائے تاکہ 30 جون کو ایم این اے، ایم پی ایز ، سیکرٹری این ایچ اے اور دوسرے اعلی عہدیداروں کے ہمراہ ان سے ملاقات کرکے ان کے مسائل کو حل کرنے کی کوشش کی جائےگی۔ اس کے بعد مظاہرین نے 30 جون تک کے لئے اپنا دھرنا ملتوی کیا تھا۔ اب تیس جون کو پھر سے عوام دھرنے میں بیٹھ گئے ہیں۔ ابھی تک کے اطلاعات کے مطابق کوئی بھی اعلی سرکاری حکام یا منتخب نمائندگان نے ان سے ملاقات نہیں کی۔
اگر آج احتجاجی مظاہرین سے کوئی اعلی سرکاری و منتخب قیادت ملاقات نہیں کرتی تو شام تک مظاہرے کے قائدین اگلے لائحہ عمل کا اعلان کریں گے۔ جس میں روڈ بلاگ سمیت مختلف آپشنز پر غور کئے جانے کا امکان ہے۔دریں اثنا ان مظاہرین سے اظہار یک جہتی کے لئے تحریک حقوقِ عوام اپر چترال نے بھی یکم جون سے گرین لشٹ سے لیکر سور ڑاسپور تک مین روڈ کو غیر معینہ مدت تک کے لئے بند کرنے کا اعلان کر کی ہے۔
فائل فوٹو۔

Print Friendly, PDF & Email