39

بچہ صحن میں کھیلتے کھیلتے گر گیا۔۔۔طارق اقبال

بچہ صحن میں کھیلتے کھیلتے گر گیا اور پڑا ہوا کانٹا ان کے بازو میں چب گیا۔میں ان تک پہنچوں اس سے پہلے انکی ماںپہنچ گئی۔اچھا ہوا بازو ٹانگ ٹوٹ جاتی کے الفاظ کے ساتھ دو زور دار طمانچے انکے چہرے پر رسید کیا۔اور گالیوںکا نہ رکنے والا سلسلہ جاری کیا۔دو اور لگانے والی تھی کہ میں نے بچے کو انکی چنگل سے اٹھا کر گود میں لے لیا۔بچہ درد کی وجہ سے زاروقطار رونے لگا اور ماں کا عصہ دیکھ کر سسکیاں لینے لگا۔بچے کو اگر معلوم ہوتا کہ وہ گرےگا تو انکے بازو میں کانٹا چبھتے گا اور ماں سے مار پڑتی تو وہ کبھی نہ گرتا۔

میں یہاں ماں باپ کی تربیت اوپر تنقید کرنا نہیں چاہتا۔لیکن ایک ایسے مسئلے پر بات کرنا چاہتا ہوں جو تقریباً ہرگھر کی کہانی ہے۔ہر گھر میں تربیت کا انداز الگ ہوتا ہے۔جس بچے کی جس انداز میں تربیت دی جاتی ہے وہ بچہوہی کچھ سیکھ کر بڑا ہوتا ہے۔اسی لئے کہا جاتا ہے جو بیٹا اپنے والدین کا نافرمان اور خودسر ہو اسکا بیٹا بھی اسکوایسے ہی نافرمان اور خودسر ملے گا۔ایک بچہ شیر خواری سے لیکر بڑا ہونے تک سیکھنے کے مراحل سے گزرتا رہتاہے اور انکے بدن پر ارتقائی تبدیلیاں ہوتی رہتی ہیں۔اس دوران وہ ہر وہ کام کرنا چاہتا ہے جو اسکو سیکھنا ہوتاہے اور جو اسکے من میں آتا ہے۔شرارت کرتا ہے کھیلتا ہے کپڑے گندے کرتا ہے اور آئے روز ماں کو کپڑےتبدیل کرنے پڑتے ہیں۔اس سیکھنے کے عمل اور جسمانی گروتھ کے عمل کے دوران جب انکو مار پڑتی ہے تو بچےکا سیکھنے کا عمل رک جاتا ہے اور اسکے جسم میں ہونے والی تبدیلی دم توڑ دیتی ہے۔اسی لئے وہ بچے جن کو بچپنمیں زیادہ مار پڑتی ہے زیادہ منہ پھٹ، بد اخلاق، سر کش اور بے ہمت ہوکر جوان ہوتی ہیں۔وہ گھروں کے اندربدتمیز اور پبلک میں جاکر بولنے کا حوصلہ کھو دیتے ہیں۔ایسے بچے زندگی کی دوڑ میں پیچھے رہ جاتے ہیں۔پھر والدینانکی ناکامی اور بداخلاقی کا زمہ دار خودبچے کو ٹھراتے ہیں۔ایک دفعہ مار کھانے والا بچہ اگلی دفعہ مار سے خوف نہیںکھاتا بلکہ وہ زیادہ بے شرم اور سرکش ہوتا جاتا ہے اسلئے بچے کے اوپر سے مار کا خوف ختم نہیں کرنا چاہئے تاکہاسکے دل میں ہمیشہ یہ خوف برقرار رہے کہ کبھی نہ کبھی وہ شرارت کرے گا اور انکو مار پڑے گی۔اپنے بچوں کولاٹھی، لاتوں، بد دعاوں اور گالیوں سے دور رکھا جائے تو انکی شخصیت نکھر سکتی ہے۔انکے اعتماد میں اضافہہوسکتا ہے اور وہ زندگی کی دوڑ میں بہت بہتر طریقے اے آگے بڑھ سکتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email