122

ملک کے دیگر حصوں کی طرح 4 اگست کو ضلع لوئر چترال میں بھی یوم شہدا منایا گیا۔

چترال(نمائندہ  ) ملک کے دیگر حصوں کی طرح 4 اگست کو ضلع لوئر چترال میں بھی یوم شہدا منایا گیا۔ کووڈ 19سے بچاؤ کے لئے جاری کردہ حکومتی ایس او پیز کی مکمل پابندی کرتے ہوئے ان تقریبات کا آغاز صبح شہدا کے ایصال ثواب کے لیے جامہ مسجد پولیس لائن لوئر چترال میں قرآن خوانی سے ہوا۔ بعدازاں ڈی پی او ضلع لوئر چترال عبدالحئی خان (پی ایس پی) اور ڈی ا یس پی ہیڈ کوارٹر ظفر خان نے شہدا کے قبروں پر سلامی دی اور پھو لوں کی چادریں چڑہا نے کے بعد انہوں نے شہدا کے ورثا ء کے ہمراہ پولیس لائن میں قائم یادگار شہدا پر سلامی دی پھول چڑھائے اور دعا کی۔ اس موقع پر بلڈ ڈ و نیشن کیمپ کابھی اہتمام کیا گیا تھا جس کا انہوں نے دورہ کیا۔اس موقع پر ایک پر وقار تقریب میں شہدا کو خراج عقیدت پیش کیا گیا۔جس میں سول سو سائٹی،پریس کلب کے صدر و ممبراور تجار یونین کے صدر اور ممبران شہدا کے ور ثا ء اور پولیس افسران نے شرکت کی اور شہدا کے و ر ثا میں گفٹ تقسیم کیے گئے اور شہدا کی درجات کی بلندی کے لیے دعا کی گئی۔ ایس پی انوسٹی گیشن محمد خالد اور ایس ڈی پی او ظفر خان بھی اس موقع پر موجود تھے۔ اس موقع پر اپنے خطاب میں ڈی پی اوعبدالحئی خان نے پولیس کے شہداء کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اپنی جانوں کو نذرانہ دے کر ملک کو دہشت گردی سے پاک کیا اور عوام کو سکھ اور چین کی زندگی گزارنے کی راہیں ہموار کردی۔ انہوں نے کہاکہ خیبر پختونخوا پولیس کی تاریخ قربانیوں اور شہادتوں سے عبارت ہے جس کے جوانوں اور افسران نے دنیا کی سب سے قیمتی چیز اپنی جان کو ملک وقوم پر نچھاور کردیا۔ انہوں نے شہادت کا رتبہ بیان کرتے ہوئے کہاکہ اللہ نے شہید کو مردہ نہیں بلکہ زندہ قرار دے دیا ہے جن کو اللہ کے ہاں سے رزق فراہم ہوتی ہے۔ انہوں نے موقع پر موجود شہداء کے ورثا ء کو یقین دلایا کہ پولیس فورس ان کے پشت پہ کھڑی ہے اور ان کے تمام مسائل حل کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

Print Friendly, PDF & Email