117

ایک خواب جو حقیقت بن گیا۔۔۔۔پروفیسررفعت مظہر

logo
پنجاب کے سابق وزیرِاعلیٰ چودھری پرویز الٰہی جب بھی اپنے کارنامے گنوانے بیٹھتے ہیں تو سب سے پہلے پنجاب ایمرجنسی سروسز یعنی ریسکیو 1122 کی تشکیل کاکریڈٹ لینے کی کوشش کرتے ہیں حالانکہ یہ ایک ایسے مردِآہن کاخواب تھاجس نے تَن تنہا اپنے آہنی عزم کے بل بوتے پراپنے خواب کوحقیقت کاروپ دے دیا ۔ اُس شخص کانام ڈاکٹر رضوان نصیرہے جنہوں نے جب پنجاب ایمرجنسی سروسز کاتصور پیش کیاتو ہماری بیوروکریسی کے بزرجمہر اُنہیں طنزیہ اندازمیں کہاکرتے تھے کہ ’’این خیال است ومحال است وجنوں‘‘۔ لیکن ڈاکٹرصاحب سچی لگن اورجذبے کے ساتھ اپنے مقصد کی تکمیل میں مگن رہے اور بالآخر پاکستان جیسے ملک میں بھی ایک عالمی معیار کی ایمرجنسی میڈیکل ، فائراینڈ ریسکیو سروسز قائم کرکے ہی دم لیاجو ایک معجزے سے کم نہیں تھا ۔یہ صرف ایک شخص ، ڈاکٹررضوان نصیر ، کی انفرادی کوشش کا ثمرتھا کہ 2004ء میں پائلٹ پراجیکٹ کے طورپر شروع ہونے والی پنجاب ایمرجنسی ایمبولینس سروسز آج ایک تَن آوردرخت کاروپ دھارکر پنجاب کے 36 اضلاع میں اپنی کامیابیوں اور کامرانیوں کے جھنڈے گاڑرہی ہے ۔
چودھری پرویزالٰہی نے 2004ء میں ایمرجنسی سروسزاکیڈمی اورہیڈ آفس کے لیے جوجگہ مہیاکی وہ بھی کسی مذاق سے کم نہیں تھی ۔ فیروزپور روڈپر پرانے ایل او ایس ڈپو ، جوگھوڑوں کے اسطبل کاروپ دھارچکا تھا ، پنجاب ایمرجنسی اکیڈمی کامقدر ٹھہرا اورڈاکٹر رضوان نصیرنے بھرتی کیے جانے والے عملے کو8 ماہ تک اپنی جیب سے تنخواہ دی ۔یہ وہ دَورتھا جب کوئی ریسکیو 1122 میں شامل ہونے کوتیار نہیں تھا جبکہ آج عالمی معیار کایہ ادارہ نہ صرف پنجاب کے 36 اضلاع اوراُن سے منسلک تحصیلوں میں فعال ہے بلکہ خیبرپختونخوا ، بلوچستان ، گلگت بلقستان اورآزاد کشمیرمیں بھی اِس کاقیام عمل میںآ چکاہے ۔ ایمبولینس سروس سے شروع ہونے والایہ ادارہ آج نہ صرف فائراینڈ واٹرریسکیو بلکہ ہرقسم کی ایمرجنسی سروسز فراہم کررہا ہے ۔ عالمی معیارکی ایمرجنسی سروسز اکیڈمی کی نئی عمارت تعمیر ہوچکی جہاں 2015ء سے ریسکیوررزکی ٹریننگ جاری ہے۔
پھرپتہ نہیں کیا ہواکہ 2015ء میں ڈاکٹررضوان نصیرکا کنٹریکٹ ری نیو نہیں کیا گیا جو ایمرجنسی اکیڈمی کے لیے ایک بہت بڑادھچکہ ثابت ہوا اورریسکیو1122 میں آہستہ آہستہ دیگرحکومتی اداروں کی طرح تباہی کے آثار نظرآنے لگے ۔ اب صورتِ حال یہ ہے کہ باقی حکومتی اداروں کی طرح ریسکیو1122بھی نان پروفیشنل بیوروکریسی کی محتاج بن کے رہ گئی ہے ۔سوال یہ ہے کہ اگرایک ادارہ ایک شخص کی سربراہی میں صفر سے شروع ہوکر اِس مقام تک پہنچ چکاہے کہ ہم اُسے بڑے فخرسے اعلیٰ عالمی معیارکا ادارہ قراردے سکتے ہیں تو پھراُسے کیوں بیوروکریسی کے تابع بناکر برباد کرنے کی کوشش کی جارہی ہے؟۔ اُس کے خودمختار ادارہ رہنے میں کیاقباحت ہے؟۔ یہ ادارہ اب بیوروکریسی کی غلط پالیسیوں کی بھینٹ چڑھتا جارہا ہے ۔ ضرورت اِس امرکی ہے کہ خادمِ اعلیٰ ذاتی دلچسپی لے کراِسے تباہ ہونے سے بچائیں کیونکہ یہی وہ ادارہ ہے جس سے عوام کی بہت سی توقعات وابستہ ہیں اورجو ہرمشکل گھڑی میں عوام کے کندھے سے کندھا ملاکر کھڑانظر آتاہے ۔ اطلاعات تویہی ہیں کہ خادمِ اعلیٰ اب اِس ادارے میں ذاتی دلچسپی لے رہے ہیں اور شنیدہے کہ ڈاکٹر رضوان نصیرکو چیئرمین ریسکیو1122 مقرر کرکے واپس لایاجا رہاہے ۔ اگرایسا ہے تویہ انتہائی خوش آئیند اقدام ہے اورتوقع کی جاسکتی ہے کہ ڈاکٹرصاحب کی سربراہی میںیہ ادارہ نہ صرف بکھرنے سے بچ جائے گابلکہ خدمت کی روشن مثالیں بھی قائم کرے گا ۔
اُدھر ملک کی اندرونی حالت یہ کہ اقتدارکے ایوانوں تک پہنچنے کے لیے کئی بھوکے گِدھ باربار جھپٹ رہے ہیں ۔ کسی کوقومی وقارتک کاخیال نہ ملکی ترقی کا ۔ وزیرِاعظم نے پارلیمنٹ میں تقریر کرتے ہوئے اپوزیشن کے سات سوالوں کے براہِ راست جواب تونہیں دیئے لیکن اُن کے خطاب میں اِن سوالات کے جوابات ضرور ڈھونڈے جاسکتے ہیں ۔ سوال یہ ہے کہ اگراِن سوالات کے ایک ایک کرکے بھی جوابات دے دیئے جاتے توپھر کیا اپوزیشن مان جاتی ؟۔ جی نہیں ! ہرگز نہیں کیونکہ یہ توپہلے سے طے شدہ تھاکہ واک آؤٹ کرناہی کرناہے ۔جس اپوزیشن کے ’’صلاح کار‘‘ شیخ رشیدجیسے لوگ ہوں ،اُس کاپھر اللہ ہی حافظ ہے ۔ شیخ صاحب توگزشتہ تین سالوں سے وزیرِاعظم کوگھر بھیجنے کی تاریخ پہ تاریخ دیتے چلے آرہے ہیں ۔ اُن کی کوئی بھی بات کبھی سچ ثابت نہیں ہوئی ، اِس کے باوجود بھی اُنہیں شرم نہیںآتی اوروہ پھرسے نئی تاریخ دینے نکل کھڑے ہوتے ہیں ۔ وزیرِاعظم کے پارلیمنٹ سے خطاب سے پہلے وہ بے پَر کی اُڑا رہے تھے کہ نوازلیگ میں 40 سے زائد اراکینِ اسمبلی کا فارورڈ بلاک بن چکا۔ اُنہیں تو یہ بھی پتہ تھاکہ وزیرِاعظم کے استعفے کے بعد اگلا وزیرِاعظم کون ہوگا ۔اُنہوں نے صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا’’مجھے اگلے وزیرِاعظم کے نام کاپتہ ہے لیکن ابھی بتاؤں گا نہیں‘‘۔ دراصل وزارتِ عظمیٰ کے سب سے بڑے امیدوار تو شیخ صاحب خود ہوں گے کیونکہ وہ اپنے آپ کوارسطوئے دوراں سمجھتے ہیں اور اپنی سیاست کے سامنے ہرکسی کی سیاست کوہیچ ، اِس لیے وزارتِ عظمیٰ اُنہی کوزیبا ہے لیکن صحافیوں کے سامنے اپنانام لیتے ہوئے اُنہیں شرم محسوس ہوتی ہوگی ۔ شیخ صاحب ایسی سیاسی جماعت کے سربراہ ہیں جس کے صدر ، سیکرٹری ، چیئرمین ، سب کچھ وہ خود ہی ہیں لیکن اُن کے حوصلے کی داددینی پڑتی ہے کہ وہ کوئی سال ڈیڑھ سال پہلے قائدِحزبِ اختلاف بننے کی کوشش بھی کرچکے ہیں ۔ اب شایداُن کی نظریں وزارتِ عظمیٰ پرہوں ۔
شیخ رشیداور پرویزالٰہی کی بھرپور کوشش تویہی تھی کہ وزیرِاعظم کی تقریر کا بائیکاٹ کیاجائے لیکن متحدہ اپوزیشن نہیں مانی ۔ پھراُنہوں نے تقریرکے دوران ہوٹنگ اوربھرپور ہنگامے کامشورہ دیالیکن اپوزیشن اُس پربھی تیارنہ ہوئی البتہ وہ اپوزیشن کے واک آؤٹ میں کامیاب ہوگئے ۔ اطلاعات یہی ہیں کہ خودعمران خاں صاحب بھی واک آؤٹ نہیں چاہتے تھے لیکن شیخ رشیدنے بھولے بھالے سید خورشیدشاہ کومنا لیا۔ اب یہی واک آؤٹ اپوزیشن کی بدنامی کاباعث بن رہاہے ۔ پرویزرشید نے کہا ’’ناک آؤٹ ہونے پراپوزیشن واک آؤٹ کرگئی ‘‘۔ اِس احمقانہ واک آؤٹ کااحساس وادراک ہوتے ہی اپوزیشن نے پارلیمنٹ کا بائیکاٹ ختم کرنے کااعلان کردیا لیکن جو کچھ ہوناتھا ، وہ تو ہوچکا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں