بھُلکڑ……..تحریر: شگفتہ مسکین۔ فرانس

بابا جی بہت بھلکڑ ہو گئے ہیں، اس نے گلی میں پاس سے چپ چاپ گذرتے اپنے بوڑھے باپ کی طرف اشارہ کیا۔ اکثر گھر کا راستہ بھول جاتے ہیں، کئی بار کھانا میز پر ہی پڑا رہتا ہے، انہیں کھانا، کھانا بھی یاد نہیں رہتا، دوائیں ٹوکری میں پڑی رہتی ہیں، کبھی لیتے ہیں مزید پڑھیں

علاج……… تحریر: شگفتہ مسکین

اس کے پاؤں کے تلوے ساری ساری رات جلتے رہتے، سوئے سوئے لگتا جیسے اس کے تلووں سے کسی نے دہکتے ہوئے انگارے چپکا دیے ہوں، حلق سوکھ کے کانٹا ہو جاتا، زبان تالو سے چپکی رہتی، آنکھوں کی بینائی دھیمی پڑتی جا رہی تھی، رات کو پیشاب کے لئے بار بار اٹھنا پڑتا، اس مزید پڑھیں

﴾ صدقہ حسینؓ﴿۔۔۔۔۔ تحریر؛ شہزادہ مبشرالملک

دردو سفر ای کتاب صدقہ حسین ؓ تو ُو غولٹ عشقو شراب صدقہ حسینؓ تُو مہ ہردیو یہ صحرا غیری کربلا ریران کو کی ہامو دی سیراب صدقہ حسینؓ تُو اصغر ؓ و اکبرؓ سید ، عباسؓ دی سردار ما حُرؓو غون دیت انقلاب صدقہ حسینؓ تُو یزدیت چھور وسکی ہانون پڑغچھیشر مہ کو میتان مزید پڑھیں

نعت مقبول۔۔۔۔اعظم سیتاپوری

تصور سے کہیں بڑھ کر یہاں ہر شے ملی مجھ کو سکون ِ قلب ہو حاصل، فضا ایسی لگی مجھ کو یہ چاہے دل کہ چوموں میں در و دیوار روضے کی ہو جیسے گل عنادل کو نبی کی ہے گلی مجھ کو تمنا تھی کہ دیکھوں میں مدینے کا حسیں منظر میں ہوں ممنون مزید پڑھیں

چلی جاتی ہے۔۔۔۔۔شاکرہ نندنی

بات سے بات کی گہرائی، چلی جاتی ہے جھوٹ آجائے تو، سچائی چلی جاتی ہے رات بھر جاگتے رہنے کا عمل ٹھیک نہیں چاند کے عشق میں، بینائی چلی جاتی ہے میں نے اس شہر کو دیکھا بھی نہیں جی بھر کے اور طبیعت ہے کہ، گھبرائی چلی جاتی ہے کُچھ دنوں کے لئے منظر مزید پڑھیں

نظم۔…مجھے کچھ گُر نہیں آتے…….از ظہورالحق دانش

مجھے یہ گُر نہیں آتا کسی کے کِذبِ عیّاں کو صداقت کا گماں دے کر حق میں ناحق بیاں دے کر گویا اپنا ایماں دے کر کوٸی مفاد حاصل کروں غرض و لالچ کے تہِ دم اصولوں کو بسمل کروں مجھے یہ گُر نہیں آتا مجھے یہ گُر نہیں آتا کہ جو انسان کی تذلیل مزید پڑھیں

باغِ چترال۔۔۔۔۔۔۔۔تحریر: رحیم علی اشرو

محبت کے خزینے نکلتے ہیں لوگوں کے زباں سے شرافت کی مہک آتی ہے خدا کی یہ گلستاں سے میری یہ وادی باغِ ارم سے کچھ کم تو نہیں ہے ذرا دیکھ دیدہِ دل سے کہیں صنم تو نہیں ہے شوقِ ریاضت دہقاں کی تقدیر میں ہے ایماں خواب میں نہیں ایماں تعبیر میں ہے مزید پڑھیں