78

خوشنودی..…تحریر۔…. شہزادہ مبشرالملک

خوشامد۔۔۔ خوشنودی۔۔۔

مکھن ماری ۔۔۔ دور جدید کے ادب کے مطابق ۔۔۔ چمچہ گری۔۔۔ ہماری ثقافت کا بہت ہی پرانا اور کاریگر ۔۔۔ فرمولا رہا ہے ۔۔ لیکن وقت کے ساتھ ساتھ اجکل کے دور میں یہ گر ۔۔۔ نسخہ کیمیا۔۔۔ کے طور پر اپنایا جاتا ہے۔ اور ہم لوگ۔۔۔ بچے۔۔۔ کی پیدایش سے لے کر بوڑھاپے تک مختلف حیثیت سے اس کی ۔۔۔خوشامد۔۔ میں لگے رہتے ہیں۔۔۔۔ سکول کے استاد سے لیکر یونیورسٹی کے پروفیسر تک سرکاری جپڑاسی سے لیکر سکیریری تک۔۔ ویلج کونسل کے معمولی ممبر سے لے کر صدر وزیر اعظم تک خوشامدیوں کا ایک جم غفیر ہے جو ۔۔۔ مکھن ماری۔۔۔ چمچہ گری۔۔۔ میں سر گردان نظر اتے ہیں ۔۔۔ ہیاں تک کہ یہ فعل خبیس۔۔۔۔ ہمارے مدرسوں مساجد کے علماء اور ایمہء کرام تک میں سرایت کر چکا ہے ۔۔ کام نکالنا ہو تو۔۔۔۔ رشوت۔۔ کو ۔۔۔ تحفہ۔۔۔ نذرانہ۔۔۔ ہدیہ۔۔۔ کے نام سے بدل کر کام نکالنے کے راستے بناءے جاتے ہیں ۔کسی بندہ مجبور کے پاس یہ۔۔۔ کارامد ھتیار۔۔۔ دستیاب نہ ہوں تو وہ اپنے ۔۔۔ عمرو عیاری۔۔۔ زنبیل سے۔۔۔۔ خوشامد۔۔۔ مسکہ ماری۔۔۔ جمجہ گری۔۔۔ کے لوازمات باہر نکال دیتا ہے۔۔مسکہ ماری کا پہلا شکار ہمارے گراٹ گرنٹ پا ۔۔۔ حضرت شیطان۔۔۔ کے ہاتھ ہوکے اس زمین پر جلوہ افروز ہوے تھے ۔تب سے ان کی اولاد میں سے بہت ہی کم لوگ اس۔۔ قبیع فعل ۔۔۔ سے خود کو بجا پاءے ہیں ورنہ یہ اسیی بیماری ہے جو۔۔۔ سر چھڑ۔۔۔ کے بولتا ہے۔۔ سوشل میڈیا اور فیس بک کی دنیا نے تو اس فن کو ۔۔۔۔ چار چاند۔۔۔ ہی لگا دییے ہیں ۔۔۔ ❤️۔۔۔ 😃🥂🙈 اور انگوٹھے کی نشان نے زرے کو پہاڑ بنادیے ہیں اور اس کھیل نے قومی وقار عزت اور تشخص کو سخت نقصان پہچایا ہے ۔۔۔ دوسروں کی خوشامد میں ہم کب سے ۔۔۔۔ غرقاب۔۔۔ ہیں اس کا اندازہ ایک سیاسی کتب کے مطالعہ کے دوران ہوا کہ ۔۔۔ بھٹو مرحوم جیسے زور اور شخص بھی یہ کارنامہ انجام دے سکتا ہے تو اج کے ۔۔۔۔بالشتیے سیاست دان اور ملازم کیا کیا گل کھلا سکتے ہیں۔
وزیر اعظم پاکستان کی حیثیت سے ایک سرکاری دورے پر ۔۔۔۔ مرحوم ذالفیقار علی بھٹو ۔۔۔ امریکہ میں تھے کہ پاکستانی سفارت خانے کی ایک تقریب میں امریکن وزیر خارجہ۔۔۔۔ ہنری کسنجر۔۔۔۔ کو دعوت دی جو اس نے قبول کی۔۔۔ بھٹو صاحب بہت خوش ہوے اور ڈنر کی تقریب سجانے کے احکامات صادد کیے۔۔۔۔ سفارتی اور کابینہ کے اراکین نے ۔۔۔۔ امریکن وزیر کے شایانشان استقبال اور ڈنر منیو بنانے میں ایک دوسرے سے بڑھ جڑھ کے مشورے دینے لگے ۔۔ وایٹ ہاوس کے سابق باورچیوں سے وزیر کے پسندیدہ خوراک کی لسٹ منگواییں گءیں ۔۔ کسنجر کے پسندیدہ رسٹورانٹ سے
معلومات اکھٹے کی گییں ۔۔۔۔ سفارت خانوں اور دیگر تقریبات میں کسنجر نے کیا۔۔۔۔ تناول۔۔۔ فرمایا تھا انہیں شاٹ لسٹ کیا گیا ان کے دوستوں سے معلومات لی گییں کہ دوروں کے دوراں اس نے کس ۔۔۔۔ڈش۔۔۔۔ پر واو۔۔۔ وٹ اے ٹست کہا تھا۔۔۔عرب ۔یورپ۔۔۔ افریقہ برصغیر کے کونسے ایسے خوراک ہیں جنہیں ۔۔۔۔ چک۔۔۔۔ کر ۔۔۔ ہنری کسنجر۔ ۔۔۔ واو کہہ سکتے ہیں غرض سیکڑوں ۔۔۔۔ طعام۔۔۔۔ کا ایک طویل ترین لسٹ مرتب ہوا ۔ گھنٹوں کی مغز خوری کے بعد ۔۔۔۔ منتخب خوراک۔۔۔۔ شاٹ لسٹ کیے گیے۔بھٹو صاحب نے قمیض کے بٹن کھول لیے پشانی سے ٹپکنے والے پسینے صاف کیے اور ساتھیوں کو اس عظیم کارنامے پر ۔۔۔۔ فاتحانہ۔۔۔انداز سے دیکھا اور شاباشی دی۔۔۔۔ ناگہان ایک ۔۔۔۔ مکھن مار۔۔ ۔ نے مسکہ لگایا ۔۔۔۔پی ایم صاحب۔ ۔۔۔
کیوں نہ ۔۔۔۔ کہیں سے ۔۔۔۔ تازہ کالے بٹیر۔۔۔ منگوالیے جاءیں جو ۔۔۔۔۔۔جنتیوں۔۔۔۔ بنی اسرایلیوں ۔۔۔ کی خوراک اور تمام خوراک کی جان ہے۔۔۔۔۔ بھٹو ۔۔۔۔ نے جھومتے ہوے اٹھے اور چیخ کر کہا۔۔۔۔ دیٹ از دے سیجشن۔۔۔۔ اب برف پیگھل سکتا ہے امریکہ اور پاکستان کے بھیج۔۔ اب اگیا اونٹ پہاڑ کے نیچے ۔مشورہ دینے والے کو ۔۔۔ ۔22 گریٹ۔۔۔۔ کی گالیان سنا دیں کہ کم بخت نے یہ زرین مشورہ اتنی دیر سے کیوں دیا۔۔۔۔ گالی کھانے والے نے سینے پر ہاتھ رکھ کر۔۔۔۔ تسلیمات۔۔۔ بجا لاءے کہ بھٹو صاحب نے مجھے۔۔۔۔ گالی کے گلدستے ۔۔۔۔ سے شرف یاب کیا۔۔۔۔ اب دن ہی کتنے رہ گیے تھے۔تمام سفارتی عملہ بھٹو سمیت ۔۔۔۔ کالے بٹیر۔۔۔ کی تلاش میں امریکہ بھر میں ناکام پھرے۔ رات دوبارہ۔۔۔۔ زیرک دماغوں۔۔ نےسر جھوڑ لیے کہ کیسے اور کہاں سے کالے بٹیر مل سکتے ہیں۔
ایک سیانے مشیر نے مشورہ دیا۔۔۔۔۔ سر وقت بہت کم رہ گیا ہے بہتر ہے کہ اپ اپنی جہاز پاکستان روانہ کریں کہ کراچی سے جتنا چاہے لاسکتا ہے ۔۔۔۔ بھٹو صاحب نے ایک ۔۔۔ سونامی ٹایپ۔۔۔۔ گالی کے ساتھ ۔۔۔۔ مشیر کا زوردار بھوسہ لیا اور ۔۔۔۔ سی ون تھرٹی۔۔۔۔ طیارے کو کراچی پہچنے کے احکامات صادر کیے۔۔۔۔ دوسرے دن۔۔۔۔۔ دوہزار۔۔۔۔ کالے بٹیر۔۔۔ لیے طیارہ امریکہ لینڈ کیا تو خوشی کے شادیانے سفارت خانے میں بجاییے گیے۔۔۔ لیکن سفارت خانے کے باورچی نے ۔۔۔۔ کالے بٹیر ۔۔۔ بروسٹ کرنے سے یہ کہہ کر معذرت کی کہ اس کا کوءی تجربہ نہیں ہے۔۔۔۔۔ دوسری بار ۔۔۔۔۔ عوامی لہو۔۔۔۔ کے اایندھن سے لیس ہوکر طیارہ کراچی پہچا اور شاہی باورچی کو لے کر امریکہ اترا تو اسی شام امریکن صدر کے اعزاز میں ڈنر ہونا تھا۔۔۔سب کے چہرے لٹکے ہوے تھے اچانک ۔۔۔۔ باورچی کی امد کا اعلان ہوا بہت سے جام ٹکرایے گءے اور حالت بے خودی میں۔۔۔۔۔ سجدہ شکر ۔۔۔ بھی بجالایے گییے۔۔۔ سفارتی عملہ وزرا سمیت باورچی کی مدد میں مگن رہے۔۔۔۔ امریکن صدر کی اسانی کے لیے۔۔۔۔ کالے بٹیر۔۔۔۔ کا شجرہ ۔جنت سے وادی سینا کی صحرا نوردی تک کے قیصے اس میں موجود وٹامنز ۔لحمیات وغیرہ کے۔۔ بریف نوٹ۔۔۔ تیار ہوے۔۔۔
احر وہ مبارک گھڑی اپہنجھی کہ پاکستان ہاوس میں ۔۔۔۔ہنری کسنجر۔۔۔۔ قدم رنجہ فرمایا۔ اور بھٹو کو مخاطب کر کے کہنے لگے” مسٹر پرایم منسٹر میں بہت مصروف ہوں اپ لوگوں کو صرف پندرہ منٹ وقت دے سکتا ہوں۔۔۔ سب نے کھانے کے میز پر نگاہیں گاڑ دیں اور منتحب ۔۔۔۔ مینو۔۔۔۔ صدر کے اگے پیش کیے۔۔۔۔جو اس نے پڑھے بغیر ہی گلاس کے نیچے رکھ دی۔۔۔۔۔ کالے جنتی بٹیروں کے ٹرے ان کے سامنے لاءی گءی تو۔۔۔۔ نو تھینگس۔۔۔۔ کہا اور ۔۔۔۔ سلاد۔۔۔ کے دو ٹکڑے اٹھاءے اور۔۔۔۔ بھٹو۔۔۔۔ کا حا ل احوال پوچھا ہی تھا کہ ان کے سیکڑہری نے ادں سے دریافت کیا سر ہمارے لیے کیا حکم ہے۔۔۔ کسنجر ۔۔ نے گھڑی گماءی اور بھٹوسے کہا۔
تھینگ یو مسٹر پرایم منسٹر ۔ ۔۔۔ وی ویل میٹ سون۔۔۔۔ یہ کہتے ہوے اٹھے اور ہاتھ ہلاتے ہوے رحصت ہوے۔
یہ تھی ۔۔۔۔ خوشامد اورجوشودی کی جمہوری کہانی ۔جو سب کے سب اللہ اور اس کے رسول کے لایے ہوے نظام سے بغاوت اور بے زاری کے سبب ہمارے گلے کا ہار بنا ہوا ہے۔ اج بھی مدینے کی ریاست کا ۔۔۔۔ امیر۔۔۔۔ واشینگٹن سے کسی ۔۔۔ کال۔۔۔ کے۔ انتظار میں گھلا جارہا ہے۔اور اس ۔۔۔۔ نظام۔۔۔ کے لا گو کرنے سے ہچکچا رہا ہے جو ۔۔۔۔ دنیا اور اخرت میں۔۔۔ سر اٹھا۔۔۔ کے جینے کا درس دیتا ہے۔
۔۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں