پوچھا جو میں نے اِک دن خُدا سے

 

ڈاکٹر شاکرہ نندن

پوچھا جو میں نے اِک دن خُدا سے

اندر میرے یہ کیسا شور ہے

ہنسا مُجھ پر خُدا، پھر بولا

چاہتیں تیری کُچھ اور تھیں

تیرا راستہ کُچھ اور ہے

سیرت کا پاسباں تھا توُ

صورت پر تیرا زور ہے

آسمان، چاند و تارے آرزو تھی تیری

بند دیواروں کی قید پر زور ہے

خواب تھے تیرے کُھلی فضائوں کے

بزمِ دہر میں بسنے کی کوشش پُرزور ہے

Check Also

راز…….ڈاکٹر شاکرہ نندنی

    میں نے اس بھوکے آدمی کو پیٹ بھـر کر کھانا کھلایا اور یونہـی …