194

اسسٹنٹ کمشنر چترال عبدالاکرم کے زیرنگرانی (NDMP کی جانب سے سکولوں کی سطح پر قدرتی آفات و خدشات کے حوالے سے پروگرام

چترال (نمائندہ ڈیلی چترال) نیٹ ورک اف ڈیزاسٹر منجمنٹ پریکٹیشنر (NDMP) کے زیر اہتمام اور یو ایس ایڈ کے مالی تعاون سے جاری پروجیکٹ کا افتتاح گزشتہ روز چترال کے ایک مقامی ہوٹل میں منعقد ہوا۔جس کے مہمان خصوصی اسسٹنٹ کمشنر چترال عبدالاکرم تھے۔س موقع پر NDMAکے ذمہ داران ،محکمہ ایجوکیشن چترال مردانہ اور زنانہ کے EDOsممتاز محمد،ذبیدہ خانم ڈسٹرکٹ سوشل ویلفئیر افیسر نصرت ،ورلڈ فوڈ کے ابوبکر اورNDMPکے پراجیکٹ منیجر شفیع اللہ بھی موجود تھے۔ورکشاپ کا مقصد سرکاری سکولوں کی سطح پر قدرتی آفات و خدشات کے حوالے سے بچوں میں آگہی اور 34سکولوں کے انتخاب سے متعلق تھا۔اس موقع پر شرکاء نے چترال یونین کونسل ون،ٹو اور تھری کے 34مردانہ و زنانہ پرائیمری اور مڈل سکولوں کی نشان دہی کی۔تقرین مے مہمان خصوصی اسسٹنٹ کمشنر چترال عبدالاکرم نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بچے ہمارے قیمتی اثاثہ ہیں تعلیمی ماحول میں اُن کے تحفظ کو یقینی بنانا ہماری ذمہ داری ہے۔2005کے زلزلہ میں سب سے زیادہ نقصانات سکولوں اور وہان پڑھنے والے بچوں کا ہوا۔اس کو مد نظر رکھتے ہوئے وقت کا تقاضا ہے کہ ہم آئندہ اپنے سکولوں کی تعمیر میں بلڈنگ کوڈپر سختی سے عمل کریں ۔اساتذہ اور بچوں میں قدرت آفات سے بچاؤ کے حوالے سے آگہی پیدا کئے جائیں۔س سلسلے میں NDMPک کردار بہت اہم ہے۔اُنہوں نے مالی تعاون پر یو ایس ایڈ کا شکریہ اداکیا۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے محکمہ ایجوکیشن چترال کے EDOsممتاز محمد اور ذبیدہ خانم نے قدرتی آفات سیلاب اور زلزلوں سے سکولوں کو پہنچنے والے نقصانات پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔اُنہوں نے بھیUSAIDاور NDMPکا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ اس قسم کا پروگرام وقت کی اہم ضرورت تھی۔NDMPکے پراجیکٹ منیجر شفیع اللہ نے اخر میں مہمانوں کی طرف سے پروگرام میں دلچسپی لینے اور تعاون کی یقین پر اں کا شکریہ ادا کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں