Breaking News

(مجھے کو ن سنے گا) ۔۔اے آمدانت با عث شاد مانی ماء۔۔عنایت اللہ اسیر سماجی کارکن

fff2
تا جکستان کے صدر کے پا کستان آمد کے مو قع پر ہم اہلیاں پا کستان بالعموم و باشندگان چترال و خیبر پختونخوا بالخصوص دل کی گہرائیوں سے ان کو خوش آمدید کہتے ہیں یقیناًان کی تشریف آوری پا کستان و تا جکستان جن میں صر ف پ اور ت کا فرق ہے اس مختصر سے حرف کے فاصلے کو بھی مٹاکران کے برادرانہ تعلقات کے مظبو ط استوار کر کے ان دو نوں ملکو ں کیلئے با عث خوشحالی باعث ترقی ،با عث اطمینان و سکون اور راحت و آسانیاں پیدا کر نے کا سبب ہو گا۔خوشحالی اس لئے کہ لواری ٹنل اور وادئی چترال سے گوادر تک کا مختصر ترین راستہ سینٹرل ایشیاء کے ممالک کو دستیاب ہو گا ترقی کا سبب یوں ہو گا کہ ہر قسم کے سامان کی رسدپا کستان سے تاجکستان قلیل وقت میں زمینی راستے سے پہنچا نا ممکن ہو گا اطمینان و سکون اس لئے کہ مسلمان ممالک کا آپس میں مضبوط رشتہ پا کستان اور تا جکستان کے باشندوں کے لئے محبتوں کا ذریعہ پر انے تہذیبی روابط کی بحالی اور مو سیقی سے لے کر مہمان داری و ادب و احترام کے مراسم بحال ہو کر ایک دوسرے کی مضبوطی کا سبب بنیں گے ۔

راحت و آسانی اس لئے کہ سینٹر ایشیاء کے ہمارے بھائی اپنے ہی برادر ملک کے زمینی راستے شب و روز استفادا کر کے پو ری دنیا سے منسلک ہو جائیں گے ۔دونو ں ممالک کے مختلف شعبوں کے ہنر مند باشندوں کے ہنر سے دو نوں ممالک استفادا کر کے اپنے وسائل کو بہتر استعمال کر سکیں گے ۔
زراعت کی ما ہرین اور پا کستان کے محنتی کسان سینٹرل ایشیاء کے وافر زرعی زمینات سے گندم ،چاول اور دیگر زرعی اجناس اُگا کر پو ری ایشیاء اور دنیا کے مختلف ممالک کو اشیا ئے خوردنوش کے شعبے میں خود کفیل کر نے کا سبب ہو نگے ۔
چشم ما روشن دل ما شاد
گوادر سے تاجکستان مثل گوادر سے کاشغر شاہراہ کی تعمیر کے لئے تمام سینٹرل ایشیا ء کے نو آذاد ممالک افغانستان ،ترکی ،ایران اور پا کستان کے نمائندوں پر مشتمل کنسور شیم اور ورکنگ گروپ کا قیام اس دورے کا اہم حصہ ہو نا چائیے تا کہ دونوں شا ھر اھو ں کی تعمیر کا کام ایک ساتھ شروع ہو سکے اور مخالفین کا منہ بند کیا جا سکے ۔جس طرح چائینہ اربوں روپے کی سر ما یہ کاری سے گوادر کا کا شغر کو ریڈور کی تعمیر کا معاہدہ اور تکمیل کا ذمہ لیا ہے اسی طرح سینٹرل ایشیاء کے ممالک پا کستان کی جغرافیائی اہمیت کو پیش نظر رکھتے ہو ئے سمندر تک رسائی کے اس عظیم منصوبے کی تعمیر ،تکمیل اور استفادے کی راہیں استوار کر نے میں دیر نہ کر یں ۔
فلحال کر نے کے کام
1۔ وقت ضائع کئے بغیر سیر و تفریح اور تجارتی غرض کے لئے ویزوں کی اجراء کو نہایت سحل اور آسان بنا یا جائے ۔قلیل معاد کے ایک ہفتے سے لیکر دس دن کے ویزٹ ویزے صرف شناختی کارڈ پر تاجرون اور سیاحوں کے لئے خیبر پختونخوا سے جاری کر نے کا اہتمام کیا جائے ۔
2۔ دو نو ں ممالک میں تجار تی اور سیاحتی سیمیناروں کا انعقاد کرا نے کے بندوبست کیا جائے ۔

About ایڈیٹر انچیف

سید نذیر حسین شاہ چترال ایک جانے مانے صحافی ہیں اور گذشتہ کئی سالوں سے مختلف اخباروں اور ٹی وی چینلز کے ساتھ بطور رپورٹر منسلک ہیں انہوں نے ابلاع عامہ میں ڈپلوما حاصل کی ہوئی ہے اور ان کے اخبار ڈیلی چترال کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ چترال سے شائع ہونے والا یہ دوسرا اخبار ہے جس کو حکومتی سطح پر سرپرستی حاصل ہے۔

Check Also

داد بیداد۔۔۔قابل ستائش۔۔ڈاکٹرعنایت اللہ فیضی

اخباری رپورٹوں کے مطابق حکومت نے سرکاری اخراجات کو کم کرنے کے لئے 29سرکاری اداروں …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *