85

شگاگو کے شہیدوں کو سلام۔۔۔۔۔ایم سرورصدیقی

OOO اس کے جسم پر میلے کچیلے ،پھٹے پرانے کپڑے تھے، چہرہ حسرت و یاس کاایک نمونہ لگ رہاتھا اسے دیکھ کر یوں محسوس ہوتا جیسے اس نے زندگی میں کبھی کوئی خوشی نہیں دیکھی۔۔۔وہ ایک گھنٹے سے ڈیوڈ اینڈ ڈیوڈ انجیئ نگ نامی کارخانے کے مالک سے ملنے کیلئے کوشش کررہاتھا اس کی چھوٹی بیٹی کافی دنوں سے بیمار تھی دوا کیلئے پھوٹی کوڑی بھی نہ تھی وہ مالک سے کچھ رقم مانگنے کی درخواست کرنا چاہتا تھالیکن منیجراس کی بات ہی نہیں مان رہاتھاوسیع و عریض دفترمیں ہنسنے اور نقرئی قہقہوں کی آوازیں اس کی کنپٹیوں پر مسلسل ہتھوڑے کی ضربوں کی مانندمحسوس ہورہی تھی ۔۔۔اتنے میں دفترکا دروازہ کھلا کارخانے کامالک باہر جانے کیلئے نکلا عقب میں ایک حسین فتنہ بھی موجود تھا۔۔۔ وہ لپک کرآگے بڑھا اس کے سامنے جاکرہاتھ جوڑکر کچھ کہنے ہی لگا تھا کہ مالک داڑھا۔۔ ایڈیٹ۔۔ تمہاری جرأ ت کیسے ہوئی میرے منہ لگنے گی۔۔ سر۔۔۔مزدور نے پھر کچھ کہنا چاہا ۔۔ لیکن اسی اثناء میں منیجرنے آگے بڑھ کر اسے دھکا دیا وہ لڑھک کر دور جاگرا اور مالک حسینہ کی باہوں میں باہیں ڈالے کار میں بیٹھ کر یہ جاوہ جا
OOO کیپ ٹاؤن کی ایک فیکٹری میں کئی مرد وزن مشینی اندازمیں کام کررہے تھے اس دوران کبھی بھی باتیں بھی کرتے فیکٹری میں اجرت کا کوئی باقاعدہ انتظام تھا نہ ڈیوٹی کے اوقات مقررتھے رات دن کی تمیز بھی نہیں تھی اکثروبیشترانہیں12 گھنٹے کام کرناپڑتا مالک اور ٹھیکیدار پھر بھی ناراض رہتے چھٹی کا تو تصور ہی نہیں تھابیماری کے دوران بھی کام کرنے کے بغیرکوئی چارہ نہ تھا کسی وجہ سے چھٹی کرنے پر اگلے دو روز کام جرمانے کے طورپر کرنا پڑتا کسی مزدور سے کوئی رعائت محال تھی آج مالکان نے اجرت دینے کا وعدہ کیا تھا اس لئے سب مزدور جوش و خروش سے کام کررہے تھے لیکن اکثریت سوچوں میں غرق۔ ایک عورت شدید بخارکے عالم میں بھی سامان پیک کررہی تھی ایک مزدور سامان اٹھا اٹھا کر لارہاتھا اس کا پاؤں دردسے سوجا ہوا تھا ایک اور مزدورکمر دردسے بے حال تھا پھربھی پیسے ملنے کی آس میں کام کئے جارہا تھا وہ سب فکرمند تھے ایک ہفتہ قبل بھی اجرت دینے کا وعدہ کرکے14گھنٹے کام لیا گیا پھر ٹال دیا گیا
OOO 1844ء تک پوری دنیا میں ایسے واقعات روزکا معمول تھے سرمایہ دار مزدوروں کو اجرت کم اور کام زیادہ لیتے تھے ان کی کوئی عزتِ نفس نہ تھی پھر آہستہ آہستہ مزدوروں کو حالات کی سنگینی کااحساس ہوا انہوں نے اپنے آپ کو منظم کرنا شروع کیا اور اجتماعی قوت سے اپنے مسائل حل کرنے کا فیصلہ کیا1862 ء تک امریکہ میں کم وبیش20سے زائد مزدور تنظیمیں وجودمیں آگئیں تھیں جنہوں نے مشترکہ لائحہۂ عمل کیلئے آپس میں مشاورت کا آغازکیا 20اگست 1886ء کو77 مزدور تنظیموں نے ’’نیشنل یونین آف لیبر‘‘کے نام سے ایک اتحاد قائم کیا جس نے اپنے یوم ِ تاسیس پرایک نکاتی چارٹرآف ڈیمانڈکااعلان کرتے ہوئے دنیا میں پہلی بار مزدوروں کیلئے اوقات کار کا تعین کا مطالبہ کیا ان کا کہنا تھاہم دن رات کے ایک تہائی وقت یعنی آٹھ گھنٹے کام کریں گے کیونکہ کام کی زیادتی کے باعث ہر سال سینکڑوں مزدور ہلاک ہو جاتے ہیں سرمایہ داروں نے یہ مطالبہ تسلیم کرنے کی بجائے انتفامی کارروائیاں تیزکردیں آخرکار یکم مئی 1886ء کو مزدوررہنماؤں نے پہلی مرتبہ ہڑتال کی کال دی جس کو ناکام بنانے کیلئے مزدوروں کو تشددکا نشانہ بنایا گیاجس پردو دن بعدپھر احتجاج کرنے کا فیصلہ کیا گیا
OOOامریکی شہر شگاگو۔۔ کو3مئی 1886ء میں مزدوروں نے اپنے مطالبات تسلیم کروانے کیلئے مکمل ہڑتال کااعلان کیاشہر ومضافات کی تمام چھوٹی بڑی فیکٹریاں اور کار خانے بند تھے سینکڑوں مزدوروں نے اپنے حقوق کیلئے ایک بڑا جلسہ کیا پولیس نے اس جلسہ کو ناکام بنانے کیلئے طاقت کا بلا جواز اور بے دریغ استعمال کرتے ہوئے نہتے مزدوروں پرفائرنگ کردی 5مزدور موقع پر ہی دم توڑ گئے متعدد زخمی ہوئے سرمایہ داروں کے ایماء پر ڈاکٹروں نے ان زخمیوں کا علاچ کرنے سے انکارکردیا OOO اس المناک واقعہ سے اگلے روز4مئی کو مزدوروں نے اپنے ساتھیوں کی تدفین کے موقعہ پرمارکیٹ چوک شگاگومیں ایک بڑی احتجاجی ریلی نکالی جس نے اختتام پر جلسہ کی شکل اختیار کرلی مقررین3مئی کو ہلاک ہونے والوں کو پر امن طریقے سے زبردست اندازمیں خراجِ تحسین پیش کررہے تھے کہ ایک پولیس انسپکٹر کیپٹن بون پونے دوسو سے رائد سپاہیوں کو لے کرجلسہ گاہ میں داخل ہوااس نے نادرشاہی اندازسے جلسہ ختم کرنے کا حکم دیااس وقت آخری مقرر سیموئیول فلیڈن تقریر کررہے تھے اسی دوران جلسہ گاہ میں ایک دھماکہ ہوا جس میں چند پولیس اہلکار مارے گئے پو لیس انسپکٹر کیپٹن بون نے طیش میں آکرمزدوروں پر گولی چلانے کا حکم دیدیا تھوڑی دیر بعدجلسہ گاہ مقتل کا منظر پیش کررہا تھاپولیس کی بے ہنگم فائرنگ سے ایک عورت، ایک بچے سمیت11مزدور ہلاک ہوگئے ایک مزدور نے اپنی قمیص سیموئیول فلیڈن کے خون سے تر کرکے ہوا میں لہراتے ہوئے اعلان کیا کہ آج سے یہ سرخ پرچم دنیا بھر کے مزدوروں کی جدوجہدکی علامت ہوگا۔۔اس کا کہا واقعی سچ ثابت ہواسرخ پرچم مزدوروں کی انقلابی مزاحمت کا نشان بن گیا۔
OOO اس واقعہ کے بعد متعددمزدوررہنماؤں کوگرفتارکرلیا گیا ان پردہشت گردی کے مقدمات قائم کردئیے گئے عدالت نے بھی جانبداری کی انتہا کردی مزدوروں کو تشددپر اکسانے،شگاگو کا امن تباہ کرنے اور پولیس اہلکاروں کے قتل کے الزام میں 4 چوٹی کے مزدور رہنماؤں اے ڈی فشر، اسپائز،اینجل اوررابرٹ پرنسز کو پھانسی جبکہ تین کو عمر قیدبا مشقت کی سزا سنائی گئی یکم مئی 1887ء کوسب سے پہلے اے ڈی فشرکو پھانسی دی گئی جب اسے پھانسی گھاٹ لیجایا جارہاتھا اس نے استقامت سے جو الفاظ کہے وہ تاریخ بن گئے اس نے کہا’’ غریبوں کی آواز کوبلند ہونے سے روکا گیا توان کی تلواریں بلندہونے سے کوئی نہیں روک سکتا۔مزدور رہنما اینجل کوجب سولی پرلٹکایاجانے لگا اس نے واشگاف الفاظ میں چیخ چیخ کرکہا’’ تم لوگ ہمیں قتل کرسکتے ہو لیکن اب اس تحریک کو نہیں دبایا جا سکتا‘‘۔۔۔رابرٹ پرنسز نے تو پھانسی کے پھندے کو چوم لیا اس کا کہنا تھا’’تم اس آواز کو بندکرنے پر قادرہو لیکن وہ دن دور نہیں جب یہ خاموشی آوازسے زیادہ طاقتور بن جائے گی‘‘۔۔۔مزدوررہنما اسپائزکو جب تختہ دارپر لٹکایا جانے لگااس کے الفاظ تھے’’ ہمیں اس پھانسی کا کوئی ملال نہیں خوشی اس بات کی ہے کہ ہم ایک اچھے مقصدکیلئے جان دے رہے ہیں‘‘ ان کا کہا حرف بہ حرف سچ ثابت ہواان کی قربانیاں آج محنت کشوں کے ماتھے کا جھومرہیں جس کی وجہ سے مزدوروں کومعاشی استحکام حاصل ہوا126سال گذرنے کے باوجودان کی قربانیاں آج بھی تروتازہ ہیں یہ اے ڈی فشر، اسپائز،اینجل اوررابرٹ پرنسز کی جدوجہدکا ثمرہے کہ مزدوروں کی ڈیوٹی کے اوقات کار طے کئے گئے ان کے بنیادی حقوق کو تسلیم کرلیا گیا بلاشبہ شگاگو کے شہیدوں کی جدوجہد انسانی تاریخ کا درخشندہ باب ہے یکم مئی دراصل بنیادی انسانی حقوق اور محنت کی عظمت پر یقین رکھنے والوں کادن ہے اسی لئے دنیا بھرمیں شگاگو شہیدوں کی قربانیوں کو خراجِ تحسین پیش کیا جاتاہے جنہوں نے مزدور حقوق کی جنگ میں ایک نئی روح پھونک دی۔۔۔ لیکن جب ہم آج کے حالات پر غورکرتے ہیں تو محسوس یوں ہوتاہے جیسے شگاگو کے شہیدوں کی قربانیاں ضائع ہوگئی ہوںآج دنیا بھر میں یکم مئی جوش و خروش سے منایا جاتاہے ،بڑے بڑے ہوٹلوں،ایڈیٹوریم ،یخ بستہ ہالوں میں مذاکرے،بحث و مباحثہ ،تقریریں اور بلندبانگ دعوے کئے جاتے ہیں اس کے برعکس سینکڑوں ہزاروں شخص مزدوروں کے حقوق کی بات کرکے سرمایہ داروں سے مک مکا کرلیتے ہیں آج بھی ہر سطح پر مزدوروں کااستحصال جاری ہے ،کہیں مزدور یونینوں کے نام پر عہدیدار ،انکے عزیز واقارب اور ملنے جلنے والے اپنے ہی اداروں میں ڈیوٹی کرنا اپنی شان کے خلاف بات سمجھتے ہیں آجراس کے خلاف ایکشن لینے کا ارادہ کرے تو ان کا سب سے بڑا ہتھیارہڑتال کی دھمکی ہوتاہے اسی طرح زیادہ تر اداروں میں پاکٹ یونین کاقیام عمل میں لایا جاتاہے جو مالکان کی ملی بھگت سے صرف اپنے لئے آسودگیاں خریدتے رہتے ہیں اور عام مزدور کے ہاتھ کچھ نہیں آتا۔۔۔اسی طرح حکومت کے کرتا دھرتا اپنے مخصوص مفادات کیلئے ۔۔منافع بخش سرکاری اداروں کو پرائیویٹ سیکٹرکو فروخت کردیتے ہیں یا انہی اداروں میں مختلف حیلوں بہانوں سے مزدوروں کی چھانٹی کی جاتی ہے۔۔۔کئی صنعتی اداروں میں وقت پر تنخواہ نہیں دی جاتی یہ سب استحصال کی مختلف شکلیں ہیں طبقاتی نظام میں آج بھی محنت کشوں کوبہت سے مسائل کا سامناہے جن میں بھوک،افلاس، غربت، بیروزگاری،مہنگائی،بیماری اور جہالت سرفہرست ہیں جس کیلئے ٹھوس منصوبہ بندی کی اشد ضرورت ہے۔۔۔ہم مسلمان ہونے کے باوجود شگاگو کے شہیدوں کو خراجِ تحسین پیش کرنے کیلئے یکم مئی اس لئے مناتے ہیں کہ انہوں نے دنیا بھرکے انسانوں کو ظلم سے بچانے کیلئے اپنی جانوں کا نذزانہ پیش کیا بلاشبہ ان کا انسانیت پر بڑااحسان ہے ان کی قربانیوں کے اثرات ہررنگ،نسل،مذہب،زبان اور ملک پر مرتب ہوئے ہم سب پر شگاگو کے شہیدوں کا لہو قرض ہے آئیے!انسانیت پر احسان کرنے والے شگاگو کے مطلوموں کوعقیدت سے سلام پیش کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں